Tum Ay Ho Na Shab e Intizaar Guzri Hai

Tum Ay Ho Na Shab e Intizaar Guzri Hai
Talash Mai Hai Sehar Baar Baar Guzri Hai
Jino Mai Jitni Guzri Bekaar Guzri Hai
Ager Chy Dil Pe Kharabi Hazaar Guzri Hai

faiz ahmad faiz

WOh Baat Saray Fasany Mai Jis Ka Zikar Na Tha
Woh Bat In ko Boahat Naa Gawaar Guzri Hai
Hoii Hai Hazrat Naa Seh Se Guftugo Jis Shab
Woh Shab Zaror Sar Koe Yar Guzri Hai
Chaman Per Gharat Gulichen Se Jany Kia Guzri
Qafs Se Ajj Saba Be Qarar Guzri Hai
Faiz Ahmad Faiz
تم آئے ہو نہ شب انتظار گذری ہے
تلاش میں ہے سحر بار بار گذری ہے
جنوں میں جتنی بھی گذری بکار گزری ہے
اگرچہ دل پہ خرابی ہزار گزری ہے
وہ بات سارے فسانے میں جسکا ذکر نہ تھا
وہ بات ان کو بہت ناگوار گزری ہے
ہوئی ہے حضرت ناصح سے گفتگو جس شب
وہ شب ضرور سر کوئے یار گزری ہے
چمن پہ غارت گلچیں سے جانے کیا گزری
قفس سے آج صبا بے قرار گزری ہے
فیض احمد فیض۔

Comments

comments